;

١ . قسم ان کی کہ باقاعدہ صف باندھیں (ف۲)

٢ . پھر ان کی کہ جھڑک کر چلائیں (ف۳)

٣ . پھر ان جماعتوں کی، کہ قرآن پڑھیں،

٤ . بیشک تمہارا معبود ضرور ایک ہے،

٥ . مالک آسمانوں اور زمین کا اور جو کچھ ان کے درمیان ہے اور مالک مشرقوں کا (ف۴)

٦ . اور بیشک ہم نے نیچے کے آسمان کو (ف۵) تاروں کے سنگھار سے آراستہ کیا،

٧ . اور نگاہ رکھنے کو ہر شیطان سرکش سے (ف۶)

٨ . عالم بالا کی طرف کان نہیں لگاسکتے (ف۷) اور ان پر ہر طرف سے مار پھینک ہوتی ہے (ف۸)

٩ . انہیں بھگانے کو اور ان کے لیے (ف۹) ہمیشہ کا عذاب،

١٠ . مگر جو ایک آدھ بار اُچک لے چلا (ف۱۰) تو روشن انگار اس کے پیچھے لگا، (ف۱۱)

١١ . تو ان سے پوچھو (ف۱۲) کیا ان کی پیدائش زیادہ مضبوط ہے یا ہماری اور مخلوق آسمانوں اور فرشتوں وغیرہ کی (ف۱۳) بیشک ہم نے ان کو چپکتی مٹی سے بنایا (ف۱۴)

١٢ . بلکہ تمہیں اچنبھا آیا (ف۱۵) اور وہ ہنسی کرتے ہیں (ف۱۶)

١٣ . اور سمجھائے نہیں سمجھتے،

١٤ . اور جب کوئی نشانی دیکھتے ہیں (ف۱۷) ٹھٹھا کرتے ہیں،

١٥ . اور کہتے ہیں یہ تو نہیں مگر کھلا جادو،

١٦ . کیا جب ہم مر کر مٹی اور ہڈیاں ہوجائیں گے کیا ہم ضرور اٹھائے جائیں گے،

١٧ . اور کیا ہمارے اگلے باپ دادا بھی (ف۱۸)

١٨ . تم فرماؤ ہاں یوں کہ ذلیل ہو کے،

١٩ . تو وہ (ف۱۹) تو ایک ہی جھڑک ہے (ف۲۰) جبھی وہ (ف۲۱) دیکھنے لگیں گے،

٢٠ . اور کہیں گے ہائے ہماری خرابی ان سے کہا جائے گا یہ انصاف کا دن ہے (ف۲۲)

٢١ . یہ ہے وہ فیصلے کا دن جسے تم جھٹلاتے تھے (ف۲۳)

٢٢ . ہانکو ظالموں اور ان کے جوڑوں کو (ف۲۴) اور جو کچھ وہ پوجتے تھے،

٢٣ . اللہ کے سوا، ان سب کو ہانکو راہِ دوزخ کی طرف،

٢٤ . اور انہیں ٹھہراؤ (ف۲۵) ان سے پوچھنا ہے (ف۲۶)

٢٥ . تمہیں کیا ہوا ایک دوسرے کی مدد کیوں نہیں کرتے (ف۲۷)

٢٦ . بلکہ وہ آج گردن ڈالے ہیں (ف۲۸)

٢٧ . اور ان میں ایک نے دوسرے کی طرف منہ کیا آپس میں پوچھتے ہوئے،

٢٨ . بولے (ف۲۹) تم ہمارے دہنی طرف سے بہکانے آتے تھے (ف۳۰)

٢٩ . جواب دیں گے تم خود ہی ایمان نہ رکھتے تھے (ف۳۱)

٣٠ . اور ہمارا تم پر کچھ قابو نہ تھا (ف۳۲) بلکہ تم سرکش لوگ تھے،

٣١ . تو ثابت ہوگئی ہم پر ہمارے رب کی بات (ف۳۳) ہمیں ضرور چکھنا ہے (ف۳۴)

٣٢ . تو ہم نے تمہیں گمراہ کیا کہ ہم خود گمراہ تھے،

٣٣ . تو اس دن (ف۳۵) وہ سب کے سب عذاب میں شریک ہیں (ف۳۶)

٣٤ . مجرموں کے ساتھ ہم ایسا ہی کرتے ہیں،

٣٥ . بیشک جب ان سے کہا جاتا تھا کہ اللہ کے سوا کسی کی بندگی نہیں تو اونچی کھینچتے (تکبر کرتے) تھے (ف۳۷)

٣٦ . اور کہتے تھے کیا ہم اپنے خداؤں کو چھوڑدیں ایک دیوانہ شاعر کے کہنے سے (ف۳۸)

٣٧ . بلکہ وہ تو حق لائے ہیں اور انہوں نے رسولوں کی تصدیق فرمائی (ف۳۹)

٣٨ . بیشک تمہیں ضرور دکھ کی مار چکھنی ہے،

٣٩ . تو تمہیں بدلہ نہ ملے گا مگر اپنے کیے کا (ف۴۰)

٤٠ . مگر جو اللہ کے چُنے ہوئے بندے ہیں (ف۴۱)

٤١ . ان کے لیے وہ روزی ہے جو ہمارے علم میں ہیں،

٤٢ . میوے (ف۴۲) اور ان کی عزت ہوگی،

٤٣ . چین کے باغوں میں،

٤٤ . تختوں پر ہوں گے آمنے سامنے (ف۴۳)

٤٥ . ان پر دورہ ہوگا نگاہ کے سامنے بہتی شراب کے جام کا (ف۴۴)

٤٦ . سفید رنگ (ف۴۵) پینے والوں کے لیے لذت (ف۴۶)

٤٧ . نہ اس میں خمار ہے (ف۴۷) اور نہ اس سے ان کا سَر پِھرے (ف۴۸)

٤٨ . اور ان کے پاس ہیں جو شوہروں کے سوا دوسری طرف آنکھ اٹھا کر نہ دیکھیں گی (ف۴۹)

٤٩ . بڑی آنکھوں والیاں گویا وہ انڈے ہیں پوشیدہ رکھے ہوئے (ف۵۰)

٥٠ . تو ان میں (ف۵۱) ایک نے دوسرے کی طرف منہ کیا پوچھتے ہوئے (ف۵۲)

٥١ . ان میں سے کہنے والا بولا میرا ایک ہمنشین تھا (ف۵۳)

٥٢ . مجھ سے کہا کرتا کیا تم اسے سچ مانتے ہو (ف۵۴)

٥٣ . کیا جب ہم مر کر مٹی اور ہڈیاں ہوجائیں گے تو کیا ہمیں جزا سزا دی جائے گی (ف۵۵)

٥٤ . کہا کیا تم جھانک کر دیکھو گے (ف۵۶)

٥٥ . پھر جھانکا تو اسے بیچ بھڑکتی آگ میں دیکھا (ف۵۷)

٥٦ . کہا خدا کی قسم قریب تھا کہ تو مجھے ہلاک کردے (ف۵۸)

٥٧ . اور میرا رب فضل نہ کرے (ف۵۹) تو ضرور میں بھی پکڑ کر حاضر کیا جاتا (ف۶۰)

٥٨ . تو کیا ہمیں مرنا نہیں،

٥٩ . مگر ہماری پہلی موت (ف۶۱) اور ہم پر عذاب نہ ہوگا (ف۶۳)

٦٠ . بیشک یہی بڑی کامیابی ہے،

٦١ . ایسی ہی بات کے لیے کامیوں کو کام کرنا چاہیے،

٦٢ . تو یہ مہمانی بھلی (ف۶۳) یا تھوہڑ کا پیڑ (ف۶۴)

٦٣ . بیشک ہم نے اسے ظالموں کی جانچ کیا ہے (ف۶۵)

٦٤ . بیشک وہ ایک پیڑ ہے کہ جہنم کی جڑ میں نکلتا ہے (ف۶۶)

٦٥ . اس کا شگوفہ جیسے دیووں کے سر (ف۶۷)

٦٦ . پھر بیشک وہ اس میں سے کھائیں گے (ف۶۸) پھر اس سے پیٹ بھریں گے،

٦٧ . پھر بیشک ان کے لیے اس پر کھولتے پانی کی ملونی (ملاوٹ) ہے (ف۶۹)

٦٨ . پھر ان کی بازگشت ضرور بھڑکتی آگ کی طرف ہے (ف۷۰)

٦٩ . بیشک انہوں نے اپنے باپ دادا گمراہ پائے،

٧٠ . تو وہ انہیں کے نشان قدم پر دوڑے جاتے ہیں (ف۷۱)

٧١ . اور بیشک ان سے پہلے بہت سے اگلے گمراہ ہوئے (ف۷۲)

٧٢ . اور بیشک ہم نے ان میں ڈر سنانے والے بھیجے (ف۷۳)

٧٣ . تو دیکھو ڈرائے گیوں کا کیسا انجام ہوا (ف۷۴)

٧٤ . مگر اللہ کے چُنے ہوئے بندے (ف۷۵)

٧٥ . اور بیشک ہمیں نوح نے پکارا (ف۷۶) تو ہم کیا ہی اچھے قبول فرمانے والے (ف۷۷)

٧٦ . اور ہم نے اسے اور اس کے گھر والوں کو بڑی تکلیف سے نجات دی،

٧٧ . اور ہم نے اسی کی اولاد باقی رکھی (ف۷۸)

٧٨ . اور ہم نے پچھلوں میں اس کی تعریف باقی رکھی (ف۷۹)

٧٩ . نوح پر سلام ہو جہاں والوں میں (ف۸۰)

٨٠ . بیشک ہم ایسا ہی صلہ دیتے ہیں نیکوں کو،

٨١ . بیشک وہ ہمارے اعلیٰ درجہ کے کامل الایمان بندوں میں ہے،

٨٢ . پھر ہم نے دوسروں کو ڈبو دیا (ف۸۱)

٨٣ . اور بیشک اسی کے گروہ سے ابراہیم ہے (ف۸۲)

٨٤ . جبکہ اپنے رب کے پاس حاضر ہوا غیر سے سلامت دل لے کر (ف۸۳)

٨٥ . جب اس نے اپنے باپ اور اپنی قوم سے فرمایا (ف۸۴) تم کیا پوجتے ہو،

٨٦ . کیا بہتان سے اللہ کے سوا اور خدا چاہتے ہو،

٨٧ . تو تمہارا کیا گمان سے رب العالمین پر (ف۸۵)

٨٨ . پھر اس نے ایک نگاہ ستاروں کو دیکھا (ف۸۶)

٨٩ . پھر کہا میں بیمار ہونے والا ہوں (ف۸۷)

٩٠ . تو وہ اس پر پیٹھ دے کر پھر گئے (ف۸۸)

٩١ . پھر ان کے خداؤں کی طرف چھپ کر چلا تو کہا کیا تم نہیں کھاتے (ف۸۹)

٩٢ . تمہیں کیا ہوا کہ نہیں بولتے (ف۹۰)

٩٣ . تو لوگوں کی نظر بچا کر انہیں دہنے ہاتھ سے مارنے لگا (ف۹۱)

٩٤ . تو کافر اس کی طرف جلدی کرتے آئے (ف۹۲)

٩٥ . فرمایا کیا اپنے ہاتھ کے تراشوں کو پوجتے ہو،

٩٦ . اور اللہ نے تمہیں پیدا کیا اور تمہارے اعمال کو (ف۹۳)

٩٧ . بولے اس کے لیے ایک عمارت چنو (ف۹۴) پھر اسے بھڑکتی آگ میں ڈال دو،

٩٨ . تو انہوں نے اس پر داؤں چلنا (فریب کرنا) چاہا ہم نے انہیں نیچا دکھایا (ف۹۵)

٩٩ . اور کہا میں اپنے رب کی طرف جانے والا ہوں (ف۹۶) اب وہ مجھے راہ دے گا (ف۹۷)

١٠٠ . الٰہی مجھے لائق اولاد دے،

١٠١ . تو ہم نے اسے خوشخبری سنائی ایک عقل مند لڑکے کی،

١٠٢ . پھر جب وہ اس کے ساتھ کام کے قابل ہوگیا کہا اے میرے بیٹے میں نے خواب دیکھا میں تجھے ذبح کرتا ہوں (ف۹۸) اب تو دیکھ تیری کیا رائے ہے (ف۹۹) کہا اے میرے باپ کی جیئے جس بات کا آپ کو حکم ہوتا ہے، خدا نے چاہتا تو قریب ہے کہ آپ مجھے صابر پائیں گے،

١٠٣ . تو جب ان دونوں نے ہمارے حکم پر گردن رکھی اور باپ نے بیٹے کو ماتھے کے بل لٹایا اس وقت کا حال نہ پوچھ (ف۱۰۰)

١٠٤ . اور ہم نے اسے ندائی فرمائی کہ اے ابراہیم،

١٠٥ . بیشک تو نے خواب سچ کردکھایا (ف۱۰۱) ہم ایسا ہی صلہ دیتے ہیں نیکوں کو،

١٠٦ . بیشک یہ روشن جانچ تھی،

١٠٧ . اور ہم نے ایک بڑا ذبیحہ اس کے فدیہ میں دے کر اسے بچالیا (ف۱۰۲)

١٠٨ . اور ہم نے پچھلوں میں اس کی تعریف باقی رکھی،

١٠٩ . سلام ہو ابراہیم پر (ف۱۰۳)

١١٠ . ہم ایسا ہی صلہ دیتے ہیں نیکوں کو،

١١١ . بیشک وہ ہمارے اعلیٰ درجہ کے کامل الایمان بندوں میں ہیں،

١١٢ . اور ہم نے اسے خوشخبری دی اسحاق کی کہ غیب کی خبریں بتانے والا نبی ہمارے قربِ خاص کے سزاواروں میں (ف۱۰۴)

١١٣ . اور ہم نے برکت اتاری اس پر اور اسحاق پر (ف۱۰۵) اور ان کی اولاد میں کوئی اچھا کام کرنے والا (ف۱۰۶) اور کوئی اپنی جان پر صریح ظلم کرنے والا (ف۱۰۷)

١١٤ . اور بیشک ہم نے موسیٰ اور ہارون پر احسان فرمایا (ف۱۰۸)

١١٥ . اور انہیں اور ان کی قوم (ف۱۰۹) کو بڑی سختی سے نجات بخشی (ف۱۱۰)

١١٦ . اور ان کی ہم نے مدد فرمائی (ف۱۱۱) تو وہی غالب ہوئے (ف۱۱۲)

١١٧ . اور ہم نے ان دونوں کو روشن کتاب عطا فرمائی (ف۱۱۳)

١١٨ . اور ان کو سیدھی راہ دکھائی،

١١٩ . اور پچھلوں میں ان کی تعریف باقی رکھی،

١٢٠ . سلام ہو موسیٰ اور ہارون پر،

١٢١ . بیشک ہم ایسا ہی صلہ دیتے ہیں نیکوں کو،

١٢٢ . بیشک وہ دونوں ہمارے اعلیٰ درجہ کے کامل الایمان بندوں میں ہیں،

١٢٣ . اور بیشک الیاس پیغمبروں سے ہے (ف۱۱۴)

١٢٤ . جب اس نے اپنی قوم سے فرمایا کیا تم ڈرتے نہیں (ف۱۱۵)

١٢٥ . کیا بعل کو پوجتے ہو (ف۱۱۶) اور چھوڑتے ہو سب سے اچھا پیدا کرنے والے اللہ کو،

١٢٦ . جو رب ہے تمہارا اور تمہارے اگلے باپ دادا کا (ف۱۱۷)

١٢٧ . پھر انہو ں نے اسے جھٹلایا تو وہ ضرور پکڑے آئیں گے (ف۱۱۸)

١٢٨ . مگر اللہکے چُنے ہوئے بندے (ف۱۱۹)

١٢٩ . اور ہم نے پچھلوں میں اس کی ثنا باقی رکھی،

١٣٠ . سلام ہو الیاس پر،

١٣١ . بیشک ہم ایسا ہی صلہ دیتے ہیں نیکوں کو،

١٣٢ . بیشک وہ ہمارے اعلیٰ درجہ کے کامل الایمان بندوں میں ہے،

١٣٣ . اور بیشک لوط پیغمبروں میں ہے،

١٣٤ . جبکہ ہم نے اسے اور اس کے سب گھر والوں کو نجات بخشی،

١٣٥ . مگر ایک بڑھیا کہ رہ جانے والوں میں ہوئی (ف۱۲۰)

١٣٦ . پھر دوسروں کو ہم نے ہلاک فرمادیا (ف۱۲۱)

١٣٧ . او ربیشک تم (ف۱۲۲) ان پر گزرتے ہو صبح کو،

١٣٨ . اور رات میں (ف۱۲۳) تو کیا تمہیں عقل نہیں (ف۱۲۴)

١٣٩ . اور بیشک یونس پیغمبروں سے ہے،

١٤٠ . جبکہ بھری کشتی کی طرف نکل گیا (ف۱۲۵)

١٤١ . تو قرعہ ڈالا تو ڈھکیلے ہوؤں میں ہوا،

١٤٢ . پھر اسے مچھلی نے نگل لیا اور وہ اپنے آپ کو ملامت کرتا تھا (ف۱۲۶)

١٤٣ . تو اگر وہ تسبیح کرنے والا نہ ہوتا (ف۱۲۷)

١٤٤ . ضرور اس کے پیٹ میں رہتا جس دن تک لوگ اٹھائے جائیں گے (ف۱۲۸)

١٤٥ . پھر ہم نے اسے (ف۱۲۹) میدان میں ڈال دیا اور وہ بیمار تھا (ف۱۳۰)

١٤٦ . اور ہم نے اس پر (ف۱۳۱) کدو کا پیڑ اگایا (ف۱۳۲)

١٤٧ . اور ہم نے اسے (ف۱۳۳) لاکھ آدمیوں کی طرف بھیجا بلکہ زیادہ،

١٤٨ . تو وہ ایمان لے آئے (ف۱۳۴) تو ہم نے انہیں ایک وقت تک برتنے دیا (ف۱۳۵)

١٤٩ . تو ان سے پوچھو کیا تمہارے رب کے لیے بیٹیاں ہیں (ف۱۳۶) اور ان کے بیٹے (ف۱۳۷)

١٥٠ . یا ہم نے ملائکہ کو عورتیں پیدا کیا اور وہ حاضر تھے (ف۱۳۸)

١٥١ . سنتے ہو بیشک وہ اپنے بہتان سے کہتے ہیں،

١٥٢ . کہ اللہ کی اولاد ہے اور بیشک وہ ضرور جھوٹے ہیں،

١٥٣ . کیا اس نے بیٹیاں پسند کیں بیٹے چھوڑ کر،

١٥٤ . تمہیں کیا ہے، کیسا حکم لگاتے ہو (ف۱۳۹)

١٥٥ . تو کیا دھیان نہیں کرتے (ف۱۴۰)

١٥٦ . یا تمہارے لیے کوئی کھلی سند ہے،

١٥٧ . تو اپنی کتاب لاؤ (ف۱۴۱) اگر تم سچے ہو،

١٥٨ . اور اس میں اور جنوں میں رشتہ ٹھہرایا (ف۱۴۲) اور بیشک جنوں کو معلوم ہے کہ وہ (ف۱۴۳) ضرور حاضر لائے جائیں گے (ف۱۴۴)

١٥٩ . پاکی ہے اللہ کو ان باتوں سے کہ یہ بتاتے ہیں،

١٦٠ . مگر اللہ کے چُنے ہوئے بندے (ف۱۴۵)

١٦١ . تو تم اور جو کچھ تم اللہ کے سوا پوجتے ہو (ف۱۴۶)

١٦٢ . تم اس کے خلاف کسی کو بہکانے والے نہیں (ف۱۴۷)

١٦٣ . مگر اسے جو بھڑکتی آگ میں جانے والا ہے (ف۱۴۸)

١٦٤ . اور فرشتے کہتے ہیں ہم میں ہر ایک کا ایک مقام معلوم ہے (ف۱۴۹)

١٦٥ . اور بیشک ہم پر پھیلائے حکم کے منتظر ہیں،

١٦٦ . اور بیشک ہم اس کی تسبیح کرنے والے ہیں،

١٦٧ . اور بیشک وہ کہتے تھے (ف۱۵۰)

١٦٨ . اگر ہمارے پاس اگلوں کی کوئی نصیحت ہوتی (ف۱۵۱)

١٦٩ . تو ضرور ہم اللہ کے چُنے ہوئے بندے ہوتے (ف۱۵۲)

١٧٠ . تو اس کے منکر ہوئے تو عنقریب جان لیں گے (ف۱۵۳)

١٧١ . اور بیشک ہمارا کلام گزر چکا ہے ہمارے بھیجے ہوئے بندوں کے لیے،

١٧٢ . کہ بیشک انہیں کی مدد ہوگی،

١٧٣ . اور بیشک ہمارا ہی لشکر (ف۱۵۴) غالب آئے گا،

١٧٤ . تو ایک وقت تم ان سے منہ پھیر لو (ف۱۵۵)

١٧٥ . اور انہیں دیکھتے رہو کہ عنقریب وہ دیکھیں گے (ف۱۵۶)

١٧٦ . تو کیا ہمارے عذاب کی جلدی کرتے ہیں،

١٧٧ . پھر جب اترے گا ان کے آنگن میں تو ڈرائے گیوں کی کیا ہی بری صبح ہوگی،

١٧٨ . اور ایک وقت تک ان سے منہ پھیرلو،

١٧٩ . اور انتظار کرو کہ وہ عنقریب دیکھیں گے،

١٨٠ . پاکی ہے تمہارے رب کو عزت والے رب کو ان کی باتوں سے (ف۱۵۷)

١٨١ . اور سلام ہے پیغمبروں پر (ف۱۵۸)

١٨٢ . اور سب خوبیاں اللہ کو سارے جہاں کا رب ہے،