;

١ . حٰمٓ

٢ . قسم اس روشن کتاب کی (ف۲)

٣ . بیشک ہم نے اسے برکت والی رات میں اتارا (ف۳) بیشک ہم ڈر سنانے والے ہیں (ف۴)

٤ . اس میں بانٹ دیا جاتا ہے ہر حکمت والا کام (ف۵)

٥ . ہمارے پاس کے حکم سے، بیشک ہم بھیجنے والے ہیں (ف۶)

٦ . تمہارے رب کی طرف سے رحمت، بیشک وہی سنتا جانتا ہے،

٧ . وہ جو رب ہے آسمانوں اور زمین کا اور جو کچھ ان کے درمیان ہے، اگر تمہیں یقین ہو (ف۷)

٨ . اس کے سوا کسی کی بندگی نہیں وہ جِلائے اور مارے، تمہارا رب اور تمہارے اگلے باپ دادا کا رب،

٩ . بلکہ وہ شک میں پڑے کھیل رہے ہیں (ف۸)

١٠ . تو تم اس دن کے منتظر رہو جب آسمان ایک ظاہر دھواں لائے گا،

١١ . کہ لوگوں کو ڈھانپ لے گا (ف۹) یہ ہے دردناک عذاب،

١٢ . اس دن کہیں گے، اے ہمارے رب! ہم پر سے عذاب کھول دے ہم ایمان لاتے ہیں (ف۱۰)

١٣ . کہاں سے ہو انہیں نصیحت ماننا (ف۱۱) حالانکہ ان کے پاس صاف بیان فرمانے والا رسول تشریف لاچکا (ف۱۲)

١٤ . اس سے روگرداں ہوئے اور بولے سکھایا ہوا دیوانہ ہے (ف۱۳)

١٥ . ہم کچھ دنوں کو عذاب کھولے دیتے ہیں تم پھر وہی کرو گے (ف۱۴)

١٦ . جس دن ہم سب سے بڑی پکڑ پکڑیں گے (ف۱۵) بیشک ہم بدلہ لینے والے ہیں،

١٧ . اور بیشک ہم نے ان سے پہلے فرعون کی قوم کو جانچا اور ان کے پاس ایک معزز رسول تشریف لایا (ف۱۶)

١٨ . کہ اللہ کے بندوں کو مجھے سپرد کردو (ف۱۷) بیشک میں تمہارے لیے امانت والا رسول ہوں،

١٩ . اور اللہ کے مقابل سرکشی نہ کرو، میں تمہارے پاس ایک روشن سند لاتا ہوں (ف۱۸)

٢٠ . اور میں پناہ لیتا ہوں اپنے رب اور تمہارے رب کی اس سے کہ تم مجھے سنگسار کرو (ف۱۹)

٢١ . اور اگر میرا یقین نہ لاؤ تو مجھ سے کنارے ہوجاؤ (ف۲۰)

٢٢ . تو اس نے اپنے رب سے دعا کی کہ یہ مجرم لوگ ہیں،

٢٣ . ہم نے حکم فرمایا کہ میرے بندوں (ف۲۱) کو راتوں رات لے نکل ضرور تمہارا پیچھا کیا جائے گا (ف۲۲)

٢٤ . اور دریا کو یونہی جگہ جگہ سے چھوڑ دے (ف۲۳) بیشک وہ لشکر ڈبو دیا جائے گا (ف۲۴)

٢٥ . کتنے چھوڑ گئے باغ اور چشمے،

٢٦ . او رکھیت اور عمدہ مکانات (ف۲۵)

٢٧ . اور نعمتیں جن میں فارغ البال تھے (ف۲۶)

٢٨ . ہم نے یونہی کیا اور ان کا وارث دوسری قوم کو کردیا (ف۲۷)

٢٩ . تو ان پر آسمان اور زمین نہ روئے (ف۲۸) اور انہیں مہلت نہ دی گئی (ف۲۹)

٣٠ . اور بیشک ہم نے بنی اسرائیل کو ذلت کے عذاب سے نجات بخشی (ف۳۰)

٣١ . فرعون سے، بیشک وہ متکبر حد سے بڑھنے والوں سے،

٣٢ . اور بیشک ہم نے انہیں (ف۳۱) دانستہ چن لیا اس زمانے والوں سے،

٣٣ . ہم نے انہیں وہ نشانیاں عطا فرمائیں جن میں صریح انعام تھا (ف۳۲)

٣٤ . بیشک یہ (ف۳۳) کہتے ہیں،

٣٥ . وہ تو نہیں مگر ہمارا ایک دفعہ کا مرنا (ف۳۴) اور ہم اٹھائے نہ جائیں گے (ف۳۵)

٣٦ . تو ہمارے باپ دادا کو لے آؤ اگر تم سچے ہو (ف۳۶)

٣٧ . کیا وہ بہتر ہیں (ف۳۷) یا تبع کی قوم (ف۳۸) اور جو ان سے پہلے تھے (ف۳۹) ہم نے انہیں ہلاک کردیا (ف۴۰) بیشک وہ مجرم لوگ تھے (ف۴۱)

٣٨ . اور ہم نے نہ بنائے آسمان اور زمین اور جو کچھ ان کے درمیان ہے کھیل کے طور پر (ف۴۲)

٣٩ . ہم نے انہیں نہ بنایا مگر حق کے ساتھ (ف۴۳) لیکن ان میں اکثر جانتے نہیں (ف۴۴)

٤٠ . بیشک فیصلہ کا دن (ف۴۵) ان سب کی میعاد ہے،

٤١ . جس دن کوئی دوست کسی دوست کے کچھ کام نہ آئے گا (ف۴۶) اور نہ ان کی مدد ہوگی (ف۴۷)

٤٢ . مگر جس پر اللہ رحم کرے (ف۴۸) بیشک وہی عزت والا مہربان ہے،

٤٣ . بیشک تھوہڑ کا پیڑ (ف۴۹)

٤٤ . گنہگاروں کی خوراک ہے (ف۵۰)

٤٥ . گلے ہوئے تانبے کی طرح پیٹوں میں جوش مارتا ہے،

٤٦ . جیسا کھولتا پانی جوش مارے (ف۵۱)

٤٧ . اسے پکڑو (ف۵۲) ٹھیک بھڑکتی آگ کی طرف بزور گھسیٹتے لے جاؤ،

٤٨ . پھر اس کے سر کے اوپر کھولتے پانی کا عذاب ڈالو (ف۵۳)

٤٩ . چکھ، (ف۵۴) ہاں ہاں تو ہی بڑا عزت والا کرم والا ہے (ف۵۵)

٥٠ . بیشک یہ ہے وہ (ف۵۶) جس میں تم شبہہ کرتے تھے (ف۵۷)

٥١ . بیشک ڈر والے امان کی جگہ میں ہیں (ف۵۸)

٥٢ . باغوں اور چشموں میں،

٥٣ . پہنیں گے کریب اور قنادیز (ف۵۹) آمنے سامنے (ف۶۰)

٥٤ . یونہی ہے، اور ہم نے انہیں بیاہ دیا نہایت سیاہ اور روشن بڑی آنکھوں والیوں سے،

٥٥ . اس میں ہر قسم کا میوہ مانگیں گے (ف۶۱) امن و امان سے (ف۶۲)

٥٦ . اس میں پہلی موت کے سوا (ف۶۳) پھر موت نہ چکھیں گے اور اللہ نے انہیں آگ کے عذاب سے بچالیا، (ف۶۴)

٥٧ . تمہارے رب کے فضل سے، یہی بڑی کامیابی ہے،

٥٨ . تو ہم نے اس قرآن کو تمہاری زبان میں (ف۶۵) آسان کیا کہ وہ سمجھیں (ف۶۶)

٥٩ . تو تم انتظار کرو (ف۶۷) وہ بھی کسی انتظار میں ہیں (ف۶۸)